کیا خُدا میرا بھی ہے ؟

From Big Picture: Scenes from Pakistan (AP Photo/Emilio Morenatti)

From Big Picture: Scenes from Pakistan (AP Photo/Emilio Morenatti)

کیا خُدا میرا بھی ہے ؟

بُھوک کے ہاتھوں میں

کھیلتی ہوئی میری سَانسیں

ظُلم کے پَنجوں میں

۔جَکڑی ہوئی میری آہیں

۔بِے بسی سے َتکتی ہیں

چار سُو میری آنکھیں

جیسے رحِم کی مُتلا شی ہوں

آج پھرپُوچھتی ہیں

کیا خالی ہاتھہ گھر لوٹ کر جاؤ گے ؟

بَچوں کو آج پھر

بھوکا سُلاؤ گے ؟

کیا خود بھی سُو پاؤ گے ؟

میرے اِرد گرد یہ

رُوشنیوں کا جُو میلہ ہے

گاڑیوں کا ریلا ہے

اِن کے درمیاں

ننگے پاؤں ننگے سر

میرا وجُود ، کس قدر اکیلا ہے

رُوز پُوچھتا ہوں خُود سے

کیا خُدا میرا بھی ہے ؟

احمد ضُحٰی

Advertisements

چُپ

چُپ کے بَنھور سے لڑتے,تُم

بے سِمت مُسافِر بن بیٹھے


آنکھیں تُو صِحرا صِحرا ہیں

خُواب جو سارے رُو بیٹھے


وہ سایہ جو تُجھـ سے لپٹا تھا

کِس چَھاؤں میں اُسکو کھو بیٹھے


حَرفوں کو کیا رَنگ دو گے ؔاحمد
رَنگ تو سارے دھُو بیٹھے

Silence

Silence ( Photographed by Me )

Silence ( Photographed by Me )

Silence…
In your hollow Eyes,
Silence…
In your shallow dreams,
Silence…
In your dripping tears,
Ah, silence
Swirling, twirling across your dying hopes
Silence…
In your fading smile
Silence..
Embracing your soul
Like  glistening lights of stars embraced the darkness of the night
Like Gushing winds embraced the dispersed leaves in autumn
Like Desires embraced by Despair
Like passion embraced by fate
Like Life embraced by death
Ah, Silence
What prevails is just Silence
….Can you hear the silence…….

Written on June, 4 2006